وزیر اعلیٰ سندھ

بجٹ تقریر کے دوران پی ٹی آئی کی ہلڑ بازی اور بدتمیزی عروج پر تھی جسے اب برداشت نہیں کیا جائیگا ،وزیر اعلیٰ سندھ

کراچی (رپورٹنگ آن لائن)وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ 7کھرب7سو ارب روپے کا بجٹ پیش کیا، دوران بجٹ تقریر پی ٹی آئی کہ ہلڑ بازی اور بدتمیزی عروج پر تھی جسے اب برداشت نہیں کیا جائیگا سابق ادوار میں وزیراعظم کو اقامے اور کمرہ عدالت میں کھڑا نہ ہونے پر گھر بھیج دیا جاتا تھا لیکن عمران خان کے ایوان میں اکثریت کھو دینے پر حکومت سے جانا پڑا جس کی وجہ سے ابھی تک وہ بوکھلائے ہوئے پھر رہے ہیں کبھی وہ غیر ملکی سازش کا ذکر کرتے ہیں ۔ اور کبھی اداروں پر چڑھائی شروع کردیتے ہیں جس کے اثرات ان کی پارٹی پر بھی ہے ۔

گزشتہ برس ہم نے ان کی ہلڑ بازی برداشت کی ،لیکن اب معاملہ برداشت سے باہر اگروہ کوئی افہام وتفہیم کی بات کرتے ہیں تو ہم ان سے بات چیت کرنے کے لئے تیار ہے۔ ان خیالات کاا ظہار انہوں نے گزشتہ روز کراچی میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔

گزشتہ روز 7کھرب اور7سو13ارب روپے کا بجٹ پیش کیا ہے ۔ اس بجٹ میں کوئی نیا ٹیکس نہیں لگایا تیا بلکہ تین شعبوں میں ٹیکس معاف کردیا گیا ہے جن میں انٹرینمنٹ ،کاٹن فری شامل ہے ۔ بجٹ میں کوئی نیا فنانس بل نہیں لایا گیا آئی ٹی کے صنعت کو ترقی دینے کے لئے متعدد اقدامات اٹھائے گئے چھوٹی سطح پر گھریلواور معمولی درجے کی آئی ٹی کا کاروبار کرنے والوں کے لئے سہولیات رکھی گئی ہیں ۔

اوران پر عائد ٹیکس 13فیصد سے کم کرکے 3فیصد کردیا گیا ہے ۔ وزیراعلیٰ سندھ نے مزید کہا کہ بجٹ میں ریکارڈ ترقیاتی سکیمیں رکھی گئیں ہیں ،سوشل سیکٹر کے لئے خاص رقم رکھی گئی ہے ،ترقیاتی فنڈز 30فیصد ہے ،غیر ترقیاتی فنڈز بہت کم ہے ، اس کے لئے 1.79ٹریلین روپے رکھے گئے ہیں ۔ 3.5بلین روپے ہیلتھ سروسز کے لئے مختص کئے گئے ہیں پیپلز بس سروس کے لئے 8ارب روپے مختص کئے گئے ہیں ، تعلیم کیلئے 30ارب اور سوشل ریلیف کیلئے 18ارب روپے رکھے گئے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ بجٹ کا خسارہ 33فیصد ہے ، کوشش ہے کہ تمام ادارے کام کریں ،سوشل پروٹیکشن کے اندر 256ارب روپے نان ترقیاتی کاموں کے لئے مختص کئے گئے ہیں، جبکہ 85ارب روپے لوکل گورنمنٹ کیلئے رکھے گئے ہیں