پی ٹی آئی

پی ٹی آئی کا کراچی کے حلقہ این اے 240 میں ضمنی انتخاب کالعدم قرار دینے کا مطالبہ

اسلام آ باد (رپورٹنگ آن لائن) پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کراچی کے حلقہ این اے 240 میں ضمنی انتخاب کالعدم قرار دینے کا مطالبہ کر تے ہوئے کہا ہے کہ این اے 240 میں صاف و شفاف انتخاب کے انعقاد کے حوالے سے الیکشن کمیشن کی کارکردگی مایوس کن ہے، محض 8 فیصد لوگوں کی ووٹنگ میں شمولیت بڑے پیمانے پر عوام کے انتخابی عمل سے لاتعلقی کا اظہار ہے، الیکشن کمیشن کا تشدد اور دھاندلی کی غیر معمولی اطلاعات کے باوجود انتخاب کو کالعدم قرار نہ دینے کا فیصلہ باعث تعجب ہے۔

تفصیلات کے مطابق چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان کی زیرصدارت سیاسی کمیٹی کا اہم اجلاس ہوا جس میں ملکی مجموعی سیاسی صورتحال پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا ۔تحریک انصاف سندھ کے صدر علی حیدر زیدی کی جانب سے این اے 240 میں ضمنی انتخاب کے حوالے سے مفصل رپورٹ پیش کی گئی ۔تحریک انصاف کی سیاسی کمیٹی کی جانب سے محض ایک حلقے میں پرامن طور پر صاف و شفاف انتخابات کے نفاذ میں ناکامی پر الیکشن کمیشن کی استعدد و صلاحیت پر گہری تشویش کا اظہار کیا گیا اور این اے 240 کے ضمنی انتخاب کو مکمل طور پر کالعدم قرار دینے کی سفارش کی گئی ۔

چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان کا الیکشن کمیشن سے این اے 240 کا انتخاب کالعدم قرار دینے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ این اے 240 میں صاف و شفاف انتخاب کے انعقاد کے حوالے سے الیکشن کمیشن کی کارکردگی مایوس کن ہے، محض 8 فیصد لوگوں کی ووٹنگ میں شمولیت بڑے پیمانے پر عوام کے انتخابی عمل سے لاتعلقی کا اظہار ہے، الیکشن کمیشن کی جانب سے تشدد اور دھاندلی کی غیر معمولی اطلاعات کے باوجود انتخاب کو کالعدم قرار نہ دینے کا فیصلہ باعث تعجب ہے، الیکشن کمیشن نے ڈسکہ کے ضمنی انتخاب میں 40 فیصد ٹرن آٹ کے باوجود انتخاب کالعدم قرار دیا، الیکشن کمیشن کی فیصلہ سازی میں دوہرے معیارات،کمیشن کے کردار پر سنجیدہ سوالات اٹھاتے ہیں، الیکشن کمیشن ضمنی انتخاب کو کالعدم قرار دے کر از سرنو انتخاب کے انعقاد کا شیڈول جاری کرے ،کراچی کے حلقہ این اے 240 میں ضمنی انتخاب کے حوالے سے تحریک انصاف کراچی کی جانب سے چیئرمین عمران خان کو پیش کی جانے والی مفصل رپورٹ کے مطابق کراچی میں حلقہ 240 میں 16 جون 2022 کو الیکشن ہوا، حلقہ 240 میں مجموعی ووٹرز کی تعداد 5 لاکھ 29 ہزار 8سو 55 ہے، ضمنی انتخاب میں 39 ہزار 7سو 29 افراد نے ووٹ کاسٹ کیا، حلقہ 240 میں ووٹر ٹرن آوٹ 9 فیصد سے بھی کم رہا، 2018 میں حلقہ 240 میں 37 فیصد افراد نے ووٹ ڈالا، ضمنی انتخاب والے دن حلقے میں لڑائی جھگڑے،سیاسی قائدین پر حملوں کا سلسلہ جاری رہا، لڑائی جھگڑوں کے نتیجے میں 1 شخص ہلاک،10 افراد زخمی اور ایک انتہائی سنجیدہ حالات میں مبتلا ہے،

الیکشن کمیشن صاف و شفاف انتخاب کے انعقاد میں ناکام رہا ہے، ووٹوں کی پرچیاں اور بیلٹ باکسز چوری ہوتے رہے، انتخاب میں حصہ لینے والی بیشتر جماعتوں،پاک سرزمین پارٹی،تحریک لبیک پاکستان اور ایم کیو ایم حقیقی نے نتائج تسلیم کرنے سے انکار کیا،رپورٹ میں بتایا گیا کہ حلقہ 240 میں دفعہ 144 نافذ رہی، محض 8 فیصد ٹرن آ¶ٹ پر یہ حالات رہے تو اگر زیادہ ٹرن آوٹ ہوتا تو کیا حالت ہوتی۔